Bottle Kuli Hai !

By looking at the title and the Insert of this post and the one prior to it and many other likewise posts, you all may be wondering If this blog has turned into a music blog, right? But let me disappoint you people by telling NO and explaining that lately I have been a  little busy with some unnecessary stuff. Not mentioning my Laziness. Because of which I have not been able to update the blog. But the good news is that I have decided to start blogging more seriously. At least it is one of my many New Years resolutions. More on that later! And also, I have been thinking of publicizing the blog through Facebook and gaining the support of you guys in helping the blog keep going. As I said before, more on that later.

For the time being, STOP whatever you are doing and LISTEN to this Qawwali. If you think that the Qawwali can wait, in that case make sure you have half an hour of FREE – by free, I mean absolute nothingness – time before you start listening to it because this song is SPECIAL. And for those of you who are listening it right now, enjoy the awesome Qawwali by the Great Nusrat Fateh Ali Khan.

 

LYRICS

رات ہے مہتاب ہے ساقی // سارا موسم شراب ہے ساقی

باز لمحات ایسے ہوتے ہیں // جن میں پینا ثواب ہے ساقی

بوتل کھولی  ہے رقص میں جام  شراب ہے // اے مے کشو تمہاری دعا کامیاب ہیں

وہ تو خالق ہیں، بنده پرور ہے // سری دنیا کا رب اکبر ہے

میرا سرمایے حیات نہ پوچھ // ایک ساقی ہے، ایک ساغر ہے

بوتل کھولی  ہے رقص میں جام  شراب ہے // اے مے کشو تمہاری دعا کامیاب ہیں

چشم ساقی سے طلب کر کے گلابی ڈورے // دل کے زخموں کو کہی بیٹھ کے سی لیتا ہوں

ساغر مے تو بڑی چیز ہیں، ایک نعمت ہے // اشک بھی آنکھ میں بر آے تو پی لیتا ہوں

بوتل کھولی  ہے رقص میں جام  شراب ہے // اے مے کشو تمہاری دعا کامیاب ہیں

ساقی ہے، چاندنی ہے، چمن ہے، شباب ہے  // ایسے حسیں وقت میں پینا ثواب ہے

تسکین کے سامان تو مل جاتے ہیں // کچھ صاحب ا ایمان تو مل جاتے ہیں

ساقی یہ دعا ہے تیرا اقبال بلند // مے خانے میں انسان تو مل جاتے ہیں

ہونٹوں سے لگاتا ہوں تو مسکاتی ہے // تسکین ہر انداز سے پہنچاتی ہے

مے اس لئے ہے مجھ کو حسینوں سے عزیز // آسانی سے شیشے میں اتر جاتی ہے

چراغ دل کا جلاؤ، بہوت اداس ہیں رات // خوشی کا جشن مناؤ، بہوت اداس ہے رات

اثر غموں کا نہ پڑھ جائے مے کشی پے میری // پلاؤ، اور پلاؤ،بہوت اداس ہے رات

میری نظر کو جننوں کا پیام دے ساقی // میری حیات کو لافانی شام دے ساقی

یہ روز روز کا پینا مجھے پسند نہیں // کبھی نہ ہوش میں آو وہ جام دے ساقی

ایک ذرا ہوش میں آو تو کوئی بات کرو // دل کی دھڑکن کو سمبھالوں تو کوئی بات کرو

ساقیا بات بھی کرنے کے کوئی تاب نہیں // جام ہونٹوں سے لگا لوں تو کوئی بات کرو

لہرا کے جھوم، جھوم کے لا، مسکرا کے لا // پھولوں کے رس میں، چاند کی کرنیں ملا کے لا

کہتے ہیں کے عمر رفتہ کبھی لوٹتی نہیں // جا میکدہ سے میری جوانی اٹھا کے لا

ہر غم کو دل آویز کیے دیتا ہوں // احساس کی لو تیز کیے دیتا ہوں

تو زلف کو کچھ اور پریشاں کر دے // میں جام کو لبریز کیے دیتا ہوں

ساقی ہے، چاندنی ہے، چمن ہے، شباب ہے

کیوں مے کدے میں شیخ جی بنتے ہو پارسا // نظریں بتا رہی ہیں کے نیت خراب ہے

جس سے کیا تھا پیاراسی نے دیے ہے غم // سچ پوچھئے تو دل کا لگانا عزاب ہے

پہلو میں ہیں رقیب تمہارے خدا کی شان // کانٹا بھی ہے وہی پے جہاں پے گلاب ہے

کہتے ہیں جام بھر کے وہ کیسی ادا کے ساتھ //  پی لو ہمارے ہاتھ سے پینا ثواب ہے

ساغر ہے، مے ہے، دور ہے، ابر بہار ہے // اب تو پی لو… پی لو… پی لو

اے زاہدہ تو شراب پی لے // نہ کر تو کچھ اجتناب پی لے

میں تیری مانوں نماز پڑھ لوں // تو میری مان، اب شراب پی لے

آدم پی لے، خدا کو مان پی لے // بڑی کافر گھٹا چایے ہوئی ہے

میں نے مانا جناب، پیتا ہوں // با خدا بے حساب پیتا ہوں

لوگ لوگوں کا خون پیتے ہیں // میں تو پھر بھی شراب پیتا ہوں

زندگی کا عذاب پیتا ہوں //  بن کے خانہ خراب پیتا ہوں

روز محشر حساب ہو نہ سکے // اس لئے بے حساب پیتا ہوں

لے کے ساغر میں آفتاب پئے // یہ سمجھ کر کے ہیں ثواب پئے

کفر ہے نعمتوں کا ٹکرانا // شیخ جی آییں شراب پیئیں

زاہد مجھے جنت کا طلبگار نہ کر // جو بس میں تیرے نہیں وہ اقرار نہ کر

وہ رندی و مستی نہیں تیرا مسلک // ساقی کے تبرک سے تو انکار نہ کر

چاک دل صد پارا کو سی لو، سی لو // کچھ دیر تو بے خودی میں جی لو، جی لو

کیوں حضرت زاہد ہے تعمل اتنا // ارے، مے خانے کے خیرات ہیں پی لو، پی لو

کس طرح ہوگی بخشش تمہاری؟ // جوش آے گا کیسے خدا کو؟

اس کی رحمت پے کر کے بروسہ // کفر ہے اس گناہ کا نا کرنا

پی لو ہمارے ہاتھ سے پینا ثواب ہے

روداد ہجر، چہرے پے تحریر ہے فنا

پڑھ لیجیے کھلی ہوئی دل کی کتاب ہے

!بوتل کھولی  ہے رقص میں جام  شراب ہے

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s